عالمی یونیورسٹی رینکنگ نے پنجاب یونیورسٹی کو ایشیا کی سب سے بہتر یونیورسٹی قرار دے دیا۔

عالمی یونیورسٹی رینکنگ نے پنجاب یونیورسٹی کو ایشیا کی سب سے بہتر یونیورسٹی قرار دے دیا۔
  • June 6, 2024
  • 58

کیو ایس ورلڈ یونیورسٹی رینکنگ نے بدھ کے روز پنجاب یونیورسٹی (پی یو) کو گزشتہ پانچ سالوں میں ایشیا کی سب سے بہتر یونیورسٹی قرار دیا، جو پاکستان کے لیے فخر کا لمحہ ہے۔

پنجاب یونیورسٹی کی جانب سے، پاکستانی سفارتخانے کے حکام بلال اکرم شاہ اور بلال ریاض نے واشنگٹن ڈی سی میں منعقدہ EduData سمٹ میں یہ اعزازی ایوارڈ حاصل کیا، جس کا اہتمام QS ورلڈ یونیورسٹی رینکنگ کے ذریعے کیا گیا تھا۔ پنجاب یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر خالد محمود نے پنجاب یونیورسٹی رینکنگ کمیٹی کے چیئرمین ڈاکٹر عثمان اعوان اور سیکرٹری ڈاکٹر شفیق الرحمان کے ہمراہ یونیورسٹی کلب میں پریس بریفنگ کی۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر محمود نے کہا کہ پنجاب یونیورسٹی نے جاپان، جنوبی کوریا، چین، سنگاپور اور بھارت جیسی ایشیائی بڑی معیشتوں کی تمام یونیورسٹیوں سے مقابلہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ ان یونیورسٹیوں کے بجٹ پنجاب یونیورسٹی کے بجٹ سے کئی گنا زیادہ ہیں لیکن اس کے باوجود پنجاب یونیورسٹی کو پچھلے پانچ سالوں سے "بہترین ادارہ - ایشیا ریجن کا ایوارڈ" ملا ہے۔

VC نے کہا کہ QS ٹیم نے حال ہی میں 5,663 اعلیٰ تعلیمی اداروں کی ساکھ اور تحقیقی پیداوار کا تجزیہ کرکے 1,503 کی درجہ بندی کی ہے اور تازہ ترین QS ورلڈ یونیورسٹی رینکنگ میں PU کو 170 پوزیشنوں کی غیر معمولی چھلانگ کے ساتھ 570 ویں نمبر پر رکھا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پچھلے سال پنجاب یونیورسٹی کی رینکنگ 740-750 تھی اور 2019-2022 تک یہ رینکنگ 800-1000 کے درمیان تھی۔

ڈاکٹر محمود نے اس شاندار کامیابی پر فیکلٹی، سٹاف اور طلباء کو مبارکباد دی۔ انہوں نے کہا کہ یہ خبر پاکستان میں اعلیٰ تعلیم کا منظرنامہ بدل سکتی ہے۔

ڈاکٹر خالد نے کہا کہ اس خبر نے یہ امید جگائی ہے کہ عزم اور مستقل مزاجی کسی بھی یونیورسٹی کو کم مالی وسائل کے باوجود عالمی سطح پر بلند کرنے کے قابل بنا سکتی ہے۔

انہوں نے گزشتہ چھ سالوں میں پنجاب یونیورسٹی رینکنگ کمیٹی کے تمام اقدامات کے بارے میں بتایا۔ انہوں نے کہا کہ اس سال پاکستان سے 14 اعلیٰ تعلیمی اداروں کی درجہ بندی کی گئی ہے۔

وی سی نے کہا کہ اس عرصے کے دوران پنجاب یونیورسٹی کے الحاق کے ساتھ 8,637 سکوپس انڈیکسڈ پیپرز شائع کیے گئے تھے۔ انہوں نے کہا کہ حوالہ جات کے لیے پچھلے چھ سالوں کا ڈیٹا استعمال کیا گیا ہے اور پنجاب یونیورسٹی کے تحقیقی کام سے حاصل کیے گئے حوالوں کی تعداد 85,554 ہے۔

ڈاکٹر محمود نے کہا کہ ایمپلائمنٹ ریپوٹیشن انڈیکیٹر میں پنجاب یونیورسٹی دنیا بھر میں 118 ویں نمبر پر رہی اور روزگار کے ریپوٹیشن انڈیکیٹر میں پنجاب یونیورسٹی دنیا بھر میں 162 ویں اور اکیڈمک ریپوٹیشن انڈیکیٹر میں پنجاب یونیورسٹی 566 ویں نمبر پر رہی۔

وائس چانسلر نے پروفیسر ڈاکٹر محمد عثمان اعوان کی سربراہی میں نوجوان پروفیسرز پر مشتمل یونیورسٹی رینکنگ کمیٹی کی کاوشوں کو سراہا۔

چیئرمین رینکنگ کمیٹی پروفیسر ڈاکٹر محمد عثمان اعوان نے کہا کہ معروف ماہرین تعلیم، اسکوپس انڈیکسڈ ریسرچ پبلیکیشنز اور حوالہ جات میں مسلسل اضافہ، طلباء کے سیکھنے کا تجربہ، عالمی مصروفیت اور پائیداری نے اس کامیابی میں اہم کردار ادا کیا۔

You May Also Like