فری لانسرز کے لیے اچھی خبر: پے پال، سٹرائپ پیمنٹ گیٹ ویز جلد پاکستان میں آ رہے ہیں۔

فری لانسرز کے لیے اچھی خبر: پے پال، سٹرائپ پیمنٹ گیٹ ویز جلد پاکستان میں آ رہے ہیں۔
  • November 2, 2023
  • 263

نگراں وفاقی وزیر برائے آئی ٹی اور ٹیلی کمیونیکیشن ڈاکٹر عمر سیف نے اشتراک کیا کہ پاکستان آنے والے ہفتوں میں ملک میں پے پال اور اسٹرائپ پیمنٹ گیٹ ویز کی دستیابی کے حوالے سے مثبت خبریں موصول ہونے کے دہانے پر ہے۔

ڈاکٹر سیف نے ایک میڈیا بریفنگ کے دوران اس امید کا اظہار کرتے ہوئے ملک کی ترقی پذیر فری لانسنگ کمیونٹی کے لیے ان خدمات کی اہمیت کو اجاگر کیا۔

فری لانسرز کے لیے مواقع کھولنا

ڈاکٹر سیف نے ان چیلنجوں کو تسلیم کیا جو پے پال اور سٹرائپ کے انضمام میں رکاوٹ بن رہے ہیں، جیسے کہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (FATF) کی ضروریات سے متعلق خدشات۔

اس کے باوجود انہوں نے پیش رفت پر اعتماد کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا، "میں پر امید ہوں کہ آنے والے چار سے چھ ہفتوں میں ہم پے پال اور سٹرائپ کے حوالے سے اچھی خبریں سنیں گے، اور کسی بھی فارمولے کے ذریعے، ہم اپنی فری لانس کمیونٹی کو یہ خدمات فراہم کریں گے۔"

پاکستان میں ایک قابل قدر آئی ٹی فری لانسنگ ورک فورس ہے، جس میں تقریباً 1.5 ملین پاکستانی اس شعبے میں مصروف ہیں، جو ملک کو عالمی سطح پر دوسری سب سے بڑی آن لائن افرادی قوت بناتا ہے۔

آئی ٹی ماحولیاتی نظام کو فروغ دینا

انہوں نے آئی ٹی سیکٹر کی ترقی کو آگے بڑھانے کے لیے ایک مضبوط انفراسٹرکچر کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے ای روزگار پروگرام کا انکشاف کیا، جس کا مقصد نجی شعبے کو بلاسود قرضوں کی پیشکش کرنا ہے، جس میں 500,000 افراد کے لیے کام کرنے کی جگہیں قائم کرنے کا منصوبہ ہے۔

پاکستان کا آئی ٹی سیکٹر تقریباً 19,000 کمپنیوں پر مشتمل ہے، جو 150,000 افراد کو ملازمتیں فراہم کر رہا ہے اور تقریباً 2.5 بلین ڈالر کی سرکاری برآمدات کر رہا ہے۔

آئی ٹی کمپنیوں کے لیے فاریکس ریزرو کو آزاد کرنا

پاکستان میں آئی ٹی کمپنیوں کے لیے ایک اہم رکاوٹ غیر ملکی کرنسی کی کمائی واپس بھیجنے پر پابندی ہے۔ ڈاکٹر سیف نے نشاندہی کی کہ بہت سی آئی ٹی فرموں نے اپنے غیر ملکی زرمبادلہ کے ذخائر اور محصولات کو ملک سے باہر رکھا ہوا ہے۔

تاہم، وزارت آئی ٹی اور پاکستان سافٹ ویئر ہاؤسز ایسوسی ایشن کے حالیہ اقدامات نے کمپنیوں کو اپنی آمدنی کا 50% امریکی ڈالر کھاتوں میں رکھنے کی اجازت دی ہے۔ ان کمپنیوں کو بین الاقوامی لین دین کی سہولت کے لیے کارپوریٹ ڈیبٹ کارڈ بھی فراہم کیے جائیں گے۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے حال ہی میں آئی ٹی برآمد کنندگان کی خصوصی غیر ملکی کرنسی اکاؤنٹس (ESFCAs) میں ان کی برآمدی آمدنی کا 35% سے بڑھا کر 50% کر دیا ہے۔

مزید برآں، ان روکے ہوئے فنڈز کے استعمال کو مزید آسان بنایا گیا ہے، جس سے IT برآمد کنندگان کو SBP یا بینکوں سے منظوری کی ضرورت کے بغیر ان کھاتوں سے ادائیگیاں کرنے کی اجازت دی گئی ہے۔ توقع ہے کہ ان اقدامات سے آئی ٹی ایکسپورٹرز کو پاکستان میں زیادہ زرمبادلہ لانے کی ترغیب ملے گی۔

ٹیکنالوجی اور سائبرسیکیوریٹی میں ترقی

پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (PTA) کے ساتھ شراکت میں، حکومت ایک سیل فون فنانسنگ اسکیم بھی متعارف کروا رہی ہے جو لوگوں کو اقساط میں اعلیٰ درجے کے فون خریدنے کے قابل بنائے گی، جس سے ممکنہ طور پر ملک میں اعلیٰ درجے کی فون مارکیٹ قائم ہوگی۔

آخر میں، وزیر نے سائبر سیکیورٹی کو بڑھانے اور آن لائن ڈیٹا کی چوری سے تحفظ فراہم کرنے کے لیے حکومت کے عزم کو اجاگر کیا، اگلے چند مہینوں میں سائبر سیکیورٹی اتھارٹی کا اعلان کرنے کے منصوبے کے ساتھ۔

یہ پیش رفت پاکستان کے آئی ٹی سیکٹر کے لیے ایک امید افزا مستقبل کی نشاندہی کرتی ہے، جو فری لانسرز اور کاروبار کے لیے یکساں مواقع فراہم کرتی ہے۔

You May Also Like