پاکستان میں پڑھنے کی عادت آہستہ آہستہ ختم ہوتی جا رہی ہے۔

پاکستان میں پڑھنے کی عادت آہستہ آہستہ ختم ہوتی جا رہی ہے۔
  • June 28, 2024
  • 80

نوجوانوں میں پڑھنے کی عادت کچھ عرصہ میں بری طرح متاثر ہوئی ہے, کیونکہ سوشل میڈیا پلیٹ فارم کے نہ رکنے والے استعمال اور آن لائن موجودگی نے ان کے روزمرہ کے وقت کا ایک بڑا حصہ چھین لیا ہے۔

پڑھنے کی عادت، جو کبھی تنقیدی سوچ کے لیے اہم سمجھی جاتی تھی، پڑھے لکھے حلقوں میں بھی آہستہ آہستہ ختم ہو گئی ہے۔ اگرچہ وسیع اور گہری پڑھنے کی دونوں عادات افراد کو ان کی زبانی صلاحیتوں کو بڑھانے، ارتکاز کو بہتر بنانے، تخیل کو بڑھانے، تفریح ​​کو فروغ دینے، رواداری بڑھانے اور تناؤ کو کم کرنے میں کئی طریقوں سے مدد کرتی ہیں۔

لیکن ٹیکنالوجی کی ہمہ گیر موجودگی اور آج کے ڈیجیٹل دور میں سوشل میڈیا کے بے دریغ استعمال نے نوجوانوں کی پڑھنے کی عادت کو نمایاں طور پر ختم کر دیا ہے۔ آن لائن پلیٹ فارمز کے ساتھ مسلسل مصروفیت نے ان کے روزمرہ کا زیادہ تر وقت ضائع کر دیا ہے، جس سے کتابیں پڑھنے کے پریکٹس کے لیے بہت کم گنجائش باقی رہ گئی ہے۔

ایس ایم ایس، واٹس ایپ، فیس بک اور ایکس میسجز کی نہ رکنے والی نشریات نے کتاب پڑھنے کی عادت کے کلچر کو بری طرح متاثر کیا ہے کیونکہ انٹرنیٹ میں تیزی اور سوشل میڈیا کی افزائش نے نوجوانوں کے ذہنوں کو بھرنا شروع کر دیا ہے۔

 "کتابیں پڑھنے کی عادت میں کمی کی بڑی وجہ انٹرنیٹ کی بڑھتی ہوئی ایجاد ہے جہاں تقریباً تمام کتابیں، تحقیقی مقالے اور رسالے ایک کلک پر آسانی سے دستیاب ہیں،" پروفیسر ڈاکٹر نعیم الرحمن خٹک، سابق چیئرمین شعبہ اقتصادیات، پشاور یونیورسٹی نے اے پی پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا۔

انہوں نے کہا کہ الیکٹرانک ریڈنگ میٹریل کا سب سے برا پہلو نہ صرف نوجوانوں کے ذہنوں کو بیہودہ مواد سے روشناس کر رہا ہے بلکہ کمپیوٹر اور اسمارٹ فونز کے سامنے زیادہ گھنٹے بیٹھے رہنے سے ان کی بینائی بھی متاثر ہوتی ہے۔

ڈاکٹر نعیم الرحمن خٹک نے کہا کہ پاکستان تقریباً 111 ملین انٹرنیٹ صارفین کا گھر ہے جہاں 188.9 ملین ایکٹو سیلولر کنکشن ہیں جو اس وقت 242.8 ملین آبادی میں سے 77.8 فیصد کے برابر کام کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ تقریباً 71.70 ملین افراد سوشل میڈیا استعمال کر رہے ہیں جو کل آبادی کا 29.5 فیصد بنتا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ 2023 سے 2024 کے درمیان ملک کی آبادی انٹرنیٹ صارفین میں 4.7 ملین کا اضافہ ہوا ہے جس میں 49.6 فیصد خواتین اور 50.4 فیصد مرد ہیں جو کہ تشویشناک بات ہے۔

ڈاکٹر نعیم نے کہا کہ پاکستان میں تقریباً 44.50 ملین افراد فیس بک، 71.70 ملین یوٹیوب، 17.30 ملین انسٹاگرام، 54.38 ملین ٹک ٹاک، 11.95 ملین فیس بک میسنجر، 30.21 ملین اسنیپ چیٹ، 4.50 ملین X صارفین اور 12 ملین لنکڈن استعمال کرتے ہیں، جس سے کتابیں پڑھنے کا کلچر متاثر ہوتا ہے۔

پاکستان میں سوشل میڈیا کے بڑھتے ہوئے صارفین کے تناظر میں، انہوں نے کہا کہ حالیہ برسوں میں خیبرپختونخوا میں سرکاری اور نجی لائبریریوں میں طلباء کی حاضری میں نمایاں کمی آئی ہے۔

گیلپ اینڈ گیلانی فاؤنڈیشن پاکستان کے حالیہ سروے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ ملک میں تقریباً 75 فیصد طلباء کوئی کتاب نہیں پڑھ رہے ہیں جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ چار میں سے تین طلباء نے کبھی کوئی کتاب نہیں پڑھی سوائے شاید یونیورسٹی یا کالج کے سکول کی نصابی کتابوں کے۔

انسٹی ٹیوٹ آف ایجوکیشن اینڈ ریسرچ (IER) UoP کے سابق ڈائریکٹر پروفیسر ڈاکٹر محمد ابراہیم نے کہا کہ طلباء اکثر اصل متن سے گریز کرتے ہوئے فوری پڑھنے اور تصاویر کو ترجیح دیتے ہیں جس سے ان کی پڑھائی پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

صوبائی وزیر برائے ہائر ایجوکیشن کے پی مینا خان نے کہا کہ ڈائریکٹوریٹ آف آرکائیوز اینڈ لائبریریز نے کتاب پڑھنے کو فروغ دینے کے لیے صوبے کے 12 اضلاع میں پبلک لائبریریاں قائم کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔

ہر ضلع میں ایک لائبریری قائم کی جائے گی جہاں یہ سہولت دستیاب نہیں ہے اور قبائلی اضلاع میں سات لائبریریاں بنائی جائیں گی۔ اپر چترال، بٹگرام، ہنگو، کرک، کولائی پلاس، لوئر اور اپر کوہستان، مالاکنڈ، شانگلہ، ٹانک، تورغر اور اپر دیر سمیت 18 اضلاع میں اس وقت پبلک لائبریریاں دستیاب ہیں۔

پشاور کے حیات آباد، ریگی اور PK-77 کے علاقوں میں مزید تین لائبریریوں کا منصوبہ بنایا گیا جبکہ لنڈی کوتل خیبر اور پاراچنار کرم اضلاع میں ایسے دو منصوبوں کے لیے زمین کا انتخاب کیا گیا۔

You May Also Like